مضبوط وکالت مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے سنگ میل ثابت ہوگی،علی امین گنڈا پور

اسلام آباد (سیاست نیوز)وفاقی وزیر امور کشمیر و گلگت بلتستان علی امین خان گنڈاپور نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ بھارت کا ہندو فاشسٹ ایجنڈا پوری دنیا کے سامنے بے نقاب ہو چکا ہے اور دنیا بھارت کو ایک ہندو انتہا پسند ریاست کے طور پر پہچاننے لگی ہے، انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں 5 اگست کے بھارتی قابل مزمت اقدامات اور بعد ازاں بھارت میں مسلمان اور اقلیت مخالف شہریت بل سے اس امر کی کھلی عکاسی ہوتی ہے کہ بھارت میں نرندر مودی کی ہندو انتہا پسند حکومت بھارت کو ایک خالصتا ہندو ریاست بنانا چاہتی ہے اور اس ہندو انتہا پسند ایجنڈے میں بھارتی ریاستی ادارے بھی بی جے پی کے ایجنٹس کے طور پر کام کر رہے ہیں ، انہوں نے کہا کہ ہندو انتہا پسندی اور جارحیت کے جس راستے پر بھارت آج گامزن ہے اس کے عالمی اور علاقائی امن کے لیے بڑے خطرناک نتائج برآمد ہوں گے، انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں کرفیو کو نافز ہوئے 200 دن سے زائد کا عرصہ گزر چکا ہے اور بھارت ان قابل مزمت اقدامات کے ذریعے مقبوضہ کشمیر کی ڈیموگرافی تبدیل کرناچاہتا ہے، انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر کے مختلف اضلاع میں ہندو پیڈتوں کی آبادکاریاں قائم کرنے کی اطلاعات انتہائی قابل مزمت ہیں اور اسرائیل طرز کے ان اقدامات سے بھارت مقبوضہ کشمیر میں مسلمان اکثریت کو اقلیت میں تبدیل کرنا چاہتا ہے، انہوں نے کہا کہ بھارت نے مقبوضہ کشمیر میں مکمل بلیک آوٹ کر رکھا ہے اور غیر ملکی اور غیر جانبدار اداروں کا مقبوضہ کشمیر میں داخلہ بند ہے، وفاقی وزیر نے کہا کہ بھارت کی جانب سے برطانوی پارلیمنٹرین ڈیبی ابراھام کے وفد کو بھارت سے ڈیپورٹ کرنے سے اس امر کی کھلی وضاحت ہو جاتی ہے کہ بھارت مقبوضہ کشمیر کے حالات کو دنیا سے چھپانا چاہتا ہے اور ظالمانہ ہتھکنڈوں سے مقبوضہ کشمیر میں جاری حق خودارادیت کی جدوجہد کو کچلنا چاہتا ہے، علی امین گنڈاپور نے کہا کہ ایک طرف بھارت کا یہ چہرہ دنیا کے سامنے آرہا ہے تو دوسری جانب ہر گزرتے دن کے ساتھ پاکستان پر دنیاکے اعتماد میں زبردست اضافہ ہو رہا ہے اور پاکستان دنیا کے نقشے پر ایک ترقی و امن پسند ملک کے طور پر سامنے آرہا ہے، انہوں نے کہا کہ برطانیہ سمیت دیگر ممالک کی جانب سے پاکستان سے متعلق مثبت ٹریول ایڈوازریزاور اقوام متحدہ کے موجودہ سیکرٹری جنرل کے دورہ پاکستان اس امر کا مظہر ہے کہ پاکستان کے اندورنی و بیرونی حالات تیزی سے مثبت جانب گامزن ہیں اور عالمی منظر نامے پر پاکستان امن کے داعی کے طور پر پہچانا جا رہا ہے، انہوں نے کہا کہ گزشتہ سال بھارتی جارحیت کے جواب سے لے کر، کرتارپور کوریڈور اور افغان امن عمل میں پاکستان کے مثبت کردار سمیت متعدد مواقعوں پرپاکستان کا احسن کردار پاکستان کی حقیقی کامیابی ہے، انہوں نے کہا کہ پاکستان کے مثبت طرز عمل اور وزیر اعظم عمران خان کی کوششیں اور کامیاب سفارتکاری کی باعث پاکستان کی ترقی کی منازل آسان ہو رہی ہیں اور وہ دن دور نہیں ہے جب ایک طرف پاکستان درپا ترقی کے حوالے سے دنیا میں جانا جائے گااور ساتھ ہی پاکستان کی مضبوط وکالت اور سفارتکاری مسلہ کشمیر کے حل میں ایک اہم سنگ میل ثابت ہو گی۔

متعلقہ خبریں