کابینہ ارکان کا اجلاس،کرونا ٹیسٹنگ لیبارٹری قائم کرنے کافیصلہ

اسلام آباد (سیاست نیوز) آزادجموں و کشمیر کابینہ کے ارکان کا اجلاس سینئر وزیر چوہدری طارق فاروق کی زیر صدارت منعقد ہوا ہوا جس میں کرونا سے نمٹنے کے لئے حفاظتی اقدامات پر غور کیا گیا۔کابینہ کے ارکان نے کرونا وائرس سے کمیونٹی کو محفوظ بنانے کیلیے سیاحوں کی آمدورفت پر تین ہفتے کی پابندی کی منظوری دے دی ہے۔کابینہ ارکان نے پرسنل پروٹیکشن ایکویپمنٹ کیلیے فوری فنڈز فراہمی کیلیے وزارت صحت کو وزارت خزانہ سے فوری رابطہ کرنے کا کہا ہے جبکہ ٹیسٹنگ لیبز کیلیے این آئی ایچ سمیت دیگر اداروں سے فوری رابطہ کرنے کی ہدایت کی ہے۔چیف سیکرٹری مطہر نیاز رانا نے ریاست بھر میں کرونا وائرس کی روک تھام اور حفاظتی اقدامات سے متعلق جموں کشمیر ہاوس اسلام آباد میں کابینہ کے ارکان کو بریفنگ دی۔اجلاس میں سینئر وزیر چوہدری طارق فاروق،وزراء کرام،راجہ مشتاق احمد منہاس،چوہدری رخسار،راجہ صدیق،راجہ عبدالقیوم،چوہدری محمد عزیز،ناصر ڈار،سید افتخار گیلانی،راجہ نصیر خان،چوہدری خالد مسعود،احمد رضا قادری،کرنل (ر) وقار نور،سید شوکت شاہ،راجہ جاوید اقبال،چوہدری شہزاد،چوہدری مسعود خالد،ڈاکٹر نجیب نقیب،سردار فاروق طاہر،،چوہدری اسماعیل، خصوصی مشیر راجہ امداد طارق،خصوصی مشیر ضیاء سردار،چیف سیکرٹری مطہر نیاز رانا،پرنسپل سیکرٹری راجہ امجد پرویز،،سیکرٹری اطلاعات،سیاحت و آئی ٹی محترمہ مدحت شہزاد،سیکرٹری مالیات عصمت اللہ شاہ،سیکرٹری سروسز چوہدری لیاقت حسین،سیکرٹری صحت اور ایڈیشنل سیکرٹری داخلہ مسعود الرحمان و دیگر اعلی حکام موجود تھے۔اس موقع پر سینئر وزیر چوہدری طارق فاروق،وزیر اطلاعات سیاحت و سپورٹس راجہ مشتاق احمد منہاس،وزیر تعلیم سید افتخار گیلانی،وزیر حکومت چوہدری رخسار،وزیر اوقاف راجہ عبدالقیوم،وزیر قانون سردار فاروق طاہر،وزیر خوراک سید شوکت شاہ، وزیر حکومت چوہدری مسعود خالد،وزیر حکومت ناصر ڈار،وزیر حکومت وقار نور نے ،درپیش خطرات کے تدارک کیلیے تجاویز دیں۔انہوں نے کہا اس حوالے سے ضلعی انتظامیہ کو متحرک کرنے کی ضرورت ہے اور اس کے ساتھ ساتھ لوگوں میں اس بارے میں آگاہی پیدا کرنا از حد ضروری ہے ۔چیف سیکرٹری نے کابینہ کے ارکان کو بریفنگ دیتے ہوے کہا کہ کرونا وائرس سے نمٹنے کیلیے کئی اہم اقدامات کئے گئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ کرونا نے چین،ایران،سعودی عرب،اٹلی،سپین سمیت کئی ملکوں کو متاثر کیا ہے۔انہوں نے کہا کہ کرونا سے نمٹنے کیلیے اعلی سطح کی سٹیٹ کوآرڈینیشن کمیٹی بنائی گئی ہے۔انہوں نے کہا کہ ایمز،سی ایم ایچ سمیت دس اضلاع کے ہسپتالوں میں ان مریضوں سے نمٹنے کیلیے الگ وارڈز موجود ہیں۔انہوں نے کہا کہ ضلعی سطح پر قرنطینہ کی سہولت موجود ہے۔انہوں نے کہا کہ ضلعی انتظامیہ اور پولیس ملکر اچھا کام کر رہی ہے جنہیں پوری طرح موبلائز کر دیا گیا ہے۔انہوں نے کہا کہ ڈسٹرکٹ ریسپانڈ ٹیمیں اور سوشل میڈیا کمپینز جاری ہیں۔انہوں نے کہا کہ اب تک ہمارے چھ اجلاس ہو چکے ہیں۔انہوں نے کہا کہ کرونا وائرس سے حفاظت کیلیے ویب سائٹ پر بھی ہدایات موجود ہیں۔انہوں نے کہا اسوقت آزادکشمیر میں 249 چین کے باشندے ہیں جن کے ٹیسٹ کروائے گئے ہیں جبکہ 97 زائرین تھے جنہیں کلئر کیا گیا ہے۔انہوں نے کہا بلوچستان حکومت سے رابطے میں ہیں جہاں سے آنے والے زائرین کو ڈیرہ غازی خان سے ہم اپنی ایمبولینسوں میں ریسیو کرتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ایسے مریضوں کیلیے چمن کوٹ،مظفرآباد اور میرپور میں خصوصی وارڈز موجود ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہر ضلع میں ایمبولینسیں موجود ہوں اور ابتدائی طور پر 50 لاکھ روپے ریلیز کئے ہیں۔انہوں نے کہا تمام گیارہ انٹری پوائنٹس پر ہماری ٹیمیں موجود ہیں۔انہوں نے کہا ہمارے پاس وبائی امراض سے روکنے کا ایکٹ 1958موجود ہے جس کی روشنی میں سارے فیصلے کئے گئے ہیں۔انہوں نے کہا ڈیلی سچویشن رپورٹ بنتی ہے اگر وزراء کرام چاہیں تو اسے شئیر کیا جا سکتا ہے۔انہوں نے کابینہ کے ارکان کو بتایا کہ۔ جملہ تعلیمی ادارہ جات بشمول سکولز‘ کالجز‘ میڈیکل کالجز‘ ٹیکنیکل اینڈ ووکیشنل ادارہ جات‘ جامعات (سرکاری و پرائیویٹ)‘ فوری طور پر آئندہ تین ہفتے تک بند رہیں گے۔ تمام امتحانات جو شروع ہوچکے ہیں یا آئندہ تین ہفتوں کے دوران شروع ہونا ہیں منسوخ تصور ہونگے۔ اس دوران جملہ ٹیوشن سینٹرز بھی بند رہیں گے۔ اس کے علاوہ جملہ اقامتی دینی مدارس‘ جملہ شادی وضیافت ہال وغیرہ بھی بند رہیں گے اس دوران شادی کی بڑی تقریبات کا انعقاد نہیں کیا جائے گا۔ جملہ سرکاری دفاتر میں ملازمین کے علاوہ دیگر افراد کی صرف ناگزیر صورت میں ہی رسائی ممکن ہوگی۔ جملہ مذہبی اجتماعات و دیگر تقریبات ماسوائے نمازپنجگانہ اور جمعتہ المبارک آئندہ تین ہفتے تک معطل رہیں گی۔ تمام سرکاری و نجی کھیلوں کی سرگرمیاں‘تہوار‘ جشن‘ عرس اور میلہ جات وغیرہ کے علاوہ عوامی اجتماعات،جلسے،ریلیز وغیرہ بھی منعقد نہیں کی جائیں گی نیزقیدیوں سے آئندہ تین ہفتے تک ملاقات پر پابندی رہے گی۔ریونیو اور دیوانی عدالتوں میں عوام الناس کی بدوں جوازیت آمدروفت سے حتمی المقدور اجتناب کیا جائے گا۔ انہوں نے بتایا کہ حکومت کی جانب دیئے گئے احکامات پر محکمہ جات‘ جملہ تعلیمی ادارہ جات مکمل عملدرآمد کو یقینی بنائیں گے۔محکمہ صحت عامہ‘ سٹیٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی‘ محکمہ اطلاعات اور ضلعی انتظامیہ کی جانب سے کرونا وائرس سے بچاو ¿کیلئے عوام الناس کی آگاہی کیلئے پمفلٹ بھی تقسیم کیئے جا رہے ہیں۔انہوں نے کابینہ کے ارکان کو بتایا کہ بس اڈوں کو بھی چیک کیا جا رہا ہے اور مسافروں کی کڑی نگرانی کی جا رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ اوورسیز کمشنر سے رابطہ کیا ہے اس کے ساتھ ساتھ میڈیا کمپینز بھی چلائی جا رہی ہیں۔سیکرٹری صحت نے اجلاس کو بتایا کہ ٹیسٹنگ لیبز قائم کرنے کیلیے این آئی ایچ سے رابطہ کیا ہے وہ اگلے تین ہفتے میں ہمیں مظفرآباد میں ٹیسٹنگ لیب قائم کر دیں گے۔انہوں نے کہا کہ ٹیسٹنگ کٹس کیلیے بھی رابطے میں ہیں۔اس سے پہلے ڈی جی ہیلتھ نے کرونا وائرس کے بارے میں کابینہ کے ارکان کو بریفنگ دی۔انہوں نے کہا کہ اسوقت 157!ملک اس کی لپیٹ میں آ چکے ہیں۔انہوں نے کہا اب اس بیماری کا ایپہ سنٹر چین سے شفٹ ہو چکا ہے۔انہوں نے کہا چین نے بڑی حد تک اسپر قابو پا لیا ہے جبکہ گزشتہ چوبیس گھنٹے کے دوران چین میں ایسے مریضوں کی تعداد 26 تھی جس میں اسکے اثرات پائے گئے جبکہ باقی ممالک میں دس ہزار چھ سو ترانوے کیس رپورٹ ہوے۔انہوں نے کہا اس سے پانچ ہزار سے زائد ہلاکتیں ہوئیں جبکہ ستتر ہزار سے زائد نے اس بیماری سے ریکور ہوے۔انہوں نے کہا جس مریض میں اسکی علامات ظاہر ہوں تو اسے الگ رکھا جائے،ماسک پہنا جائے اور زیادہ پبلک میں جانے سے گریز کیا جائے۔انہوں نے کہا یہ میل جول سے زیادہ پھیلتا ہے اس لئے اسے اوائڈ کرنے کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہا کھانسی،زکام اور بخار اسکی ابتدائی علامات ہیں۔انہوں نے کہا کہ قومی وزارت صحت سے جاری ایس او پیز پر عملدرآمد کے لئے کام کیا جا رہا ہے۔انہوں نے کہا اس حوالے سے چونتیس سو سے زیادہ پبلک اوئرنیس کمپین ہو چکی ہی

متعلقہ خبریں